تیری راہوں کی خاک چاٹی ہے

Posted in آفاق نما


تیری راہوں کی خاک چاٹی ہے
زندگی کس ادا سے کاٹی ہے

عشق رستے کے دو طرف آقا ؐ
اگہی کی مہیب گھاٹی ہے

تیری باتوں کی سر زمیں مولاؐ
میری تہذیب میری ماٹی ہے

من و یزداں کے درمیاں تو نے
دوریوں کی خلیج پائی ہے

نعت لفظوں کے چند بوٹے ہیں
آفتابوں کی فصل کاٹی ہے