آپ کا غم ہی علاجِ غمِ دوراں نکلا

Posted in آفاق نما

 

آپ کا غم ہی علاجِ غمِ دوراں نکلا
ورنہ ہر درد نصیبِ سر مژگاں نکلا



جب کسی فکر سے روشن رخِ تاریخ ہوا
غور کرنے پہ وہی ٓپ کا احساں نکلا



اور کیا چیز مرے نامہ اعمال تھی
آپ کا نام تھا بخشش کا جو ساماں نکلا



اک نئے عہد محبت کی یہ تمہید ہوئی
وہ مدنیہ سے کوئی آج خراماں نکلا



محشرِ نور کی طلعت ہے ذرا حشر ٹھہر
آج مغرب سے مرا مہرِ درخشاں نکلا



آپ کی جنبشِ لب دھر کی تقدیر بنی
چشم و ابرو کا چلن زیست کا عنواں نکلا



آپؐ کی ذات ہی معراجِ محبت ٹھہری
اور کوئی نہ مکینِ دل یزداں نکلا



ہر ادا آپؐ کی تخلیق کا اعجاز ہوئی
آپؐ کا خلقِ مجسم مرا قرآں نکلا



عقل الجھی ہے رہِ یار میں جاں دوں کہ نہ دوں
دل فدا کرنے کو ہے دولتِ ایماں نکلا



ظن و تخمینِ خرد اور مقاماتِ حضور!
شیخ کمبخت بھی کس درجہ کا ناداں نکلا