تمہا ری آمد کبھی توہو گی دلوں کے آنگن سجا ئے آقاؐ

Posted in آفاق نما

 


تمہا ری آمد کبھی توہو گی دلوں کے آنگن سجا ئے آقاؐ
ترستی آنکھوں نے فرش اپنی بصا رتوں کے بچھا ئے آقاؐ


حسین طلب کے جمیل جذبے نجانے کب سے بچھڑ چکے ہیں
جوان جسموں میں روح گم ہے یہ آدمی کے ہیں سائے آقاؐ


نوازشوں کا منیر سورج ہماری نگری پہ آج اترے
اندھیری شب کے بسیط صحرا مسافتوں میں ہیں آئے آقاؐ


گلا ب آنکھوں کے سرخ کمروں میں آگ کب سے جھڑک رہی ہے
اداس لچکوں کے دامنوں میں چراغ ہم نے جلا ئے آقاؐ


تھی سیم و زر کی قبیح چاہت کہ جسم و جاں کو ہے بیچ ڈالا
یہ زندگی کے جمیل لمحے بھی ہو گئے ہیں پرائے آقاؐ